نوسالہ بچے کے ہاتھوں پھوپھو کا غیرت کے نام پر قتل

پاکستان کے صوبہ پنجاب کے ضلع سرگودھا میں ایک 9 سال کے لڑکے نے غیرت کے نام پر اپنی سگی پھوپھو کو قتل کر دیا ہے۔

ہوا کچھ یوں کہ آج سے 10 سال پہلے مقتول خاتون نے اپنی پسند سے شادی کی تھی۔ جس پر اس کے خاندان والے خوش نہیں تھے۔ 10 سال پہلے اس خاتون کو قتل کرنے والا اس کا بھتیجا ابھی پیدا ہی نہیں ہوا تھا۔ اس کی شادی سے ایک سال کے بعد وہ پیدا ہوا تھا۔ اور ابھی وہ 9 سال کا تھا۔ 9 سال کے بچے کو کیا پتا پسند نا پسند کی شادی کا اور وہ بھی جو اس کی پیدائش سے پہلے ہوئی تھی۔

یقینا اس بچے کو اس قتل کے لیے تیار کیا گیا اور اسے اسلحہ چلانے کی تربیت دی گئی اور پوری پلاننگ کے بعد خاتون کو سسرال سے میکے بلایا گیا جہاں اک معصوم بچے کے ہاتھوں ایک معصوم عورت کا قتل ہو گیا۔

پولیس بھی اسی سلسلے میں تحقیق کر رہی ہے اور مقدمہ بچے کے بجائے اس کو تربیت دے کر ایسا کروانے والوں کے خلاف درج کیا گیا ہے، امید ہے مجرمان جلد پکڑے جائیں گے اور انھیں نہ صرف ایک خاتون کو قتل کرنے کی سزا ملے گی بلکہ ایک معصوم 9 سال کے بچے کو قاتل بنانے کی سزا بھی ملے گی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں